سرفرازتبسم کی غزلیں

سرفرازتبسم کی غزلیں

Apr 2, 2020

سرفرازتبسم کی شاعری

دیدبان شمارہ11

سرفرازتبسم کی غزلیں

خود اپنی ذات کو مسمار کرکے

کہاں جاﺅں سمندر پا ر کرکے

کھلی جب آنکھ کشتی جاچکی تھی

ملا کیا خواب سے بیدار کرکے

تسلی بھی نہیں دیتا ہے کوئی

مصیبت سے مجھے دوچار کرکے

مجھے جھکنا تھا آخر جھک گیا میں

گر ا وہ خود مجھی پہ وار کر کے

بہت دعویٰ تھا تجھ سے دوستی کا

بہت پچھتا رہا ہوں پیار کرکے

نہیں جی پاو گے ا ب تم تبسُّم

خود اپنی ذات کو بیدار کرکے.

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اُس کی آنکھ میں ایسا خواب اُتارا ہے

جس کے اندر میرا جیون سارا ہے

سچ پوچھو تو جیون ہم کو جیتا ہے

اِس جیون کو ہم نے کہاں گزارہ ہے

کمرے میں ہے روشنی تیرے بالوں سے

بالوں میں جو پھول ہے ایک ستارا ہے

لفظوں سے خوشبو سی آنے لگتی ہے

ناچتے ہیں وہ لفظ کہ جنہیں پکارا ہے

دھرتی سے امبر تک دوڑ لگائی ہے

   ڈھونڈ رہا ہوں،جانے کہاں کنارا ہے

   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

   

    میرا ربّ جب رات بنانے لگتا ہے

دن کا سارا بوجھ ٹھکانے لگتا ہے

رات پیالہ خوابوں سے بھر جائے تو

نیند سے تیرا خواب جگانے لگتا ہے

بارش کے موسم میں اکثر شام کوئی

مجھ کو تیری نظم سنانے لگتا ہے

کبھی کبھی کوئی جا دو سا ہو جاتا ہے

اور کوئی سپنا سچ ہوجانے لگتا ہے

کھڑا ہوں جا ﺅں پاﺅں پہ تومیرا سایا

آسمان کو ہاتھ لگانے لگتا ہے

آتا ہے جو دروازے کی درزّوںسے

گھر میں تیرے نقش بنانے لگتا ہے

تم نے جو باندھا ہے رستہ پیڑوں سے

مجھکو اپنے ساتھ چلانے لگتا ہے

شام گئے کوئی میرے دل کے کینوس پر

 اَشکوں سے تصویر بنانے لگتا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

   

نہیں چھوڑ سکتا میں روتا سمندر

اگر میرا دشمن بھی ہوتا سمندر

میں ہجرت جو کرتا کسی بھی جہاں میں

تمام عمر آنکھوں سے ڈھوتا سمندر

ترے ماتھے پر میں سجاتا ستارے

تری آنکھوں میں بھی سموتا سمندر

کہیں چاند تارے نہانے کو آتے

کہیں بادلوں میں بھگوتا سمندر

اسے جاگنے کی سزا مل رہی ہے

نہیں زندگی بھر یہ سوتا سمندر

تیرے شہر کویوں نہ جلنے میں دیتا

اگر میرے ہاتھوں میں ہوتا سمندر

ہر انسان نے اس کو میلا کیا ہے

میں تنہابھلا کیسے دھوتا سمندر

دیدبان شمارہ11

سرفرازتبسم کی غزلیں

خود اپنی ذات کو مسمار کرکے

کہاں جاﺅں سمندر پا ر کرکے

کھلی جب آنکھ کشتی جاچکی تھی

ملا کیا خواب سے بیدار کرکے

تسلی بھی نہیں دیتا ہے کوئی

مصیبت سے مجھے دوچار کرکے

مجھے جھکنا تھا آخر جھک گیا میں

گر ا وہ خود مجھی پہ وار کر کے

بہت دعویٰ تھا تجھ سے دوستی کا

بہت پچھتا رہا ہوں پیار کرکے

نہیں جی پاو گے ا ب تم تبسُّم

خود اپنی ذات کو بیدار کرکے.

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

اُس کی آنکھ میں ایسا خواب اُتارا ہے

جس کے اندر میرا جیون سارا ہے

سچ پوچھو تو جیون ہم کو جیتا ہے

اِس جیون کو ہم نے کہاں گزارہ ہے

کمرے میں ہے روشنی تیرے بالوں سے

بالوں میں جو پھول ہے ایک ستارا ہے

لفظوں سے خوشبو سی آنے لگتی ہے

ناچتے ہیں وہ لفظ کہ جنہیں پکارا ہے

دھرتی سے امبر تک دوڑ لگائی ہے

   ڈھونڈ رہا ہوں،جانے کہاں کنارا ہے

   ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

   

    میرا ربّ جب رات بنانے لگتا ہے

دن کا سارا بوجھ ٹھکانے لگتا ہے

رات پیالہ خوابوں سے بھر جائے تو

نیند سے تیرا خواب جگانے لگتا ہے

بارش کے موسم میں اکثر شام کوئی

مجھ کو تیری نظم سنانے لگتا ہے

کبھی کبھی کوئی جا دو سا ہو جاتا ہے

اور کوئی سپنا سچ ہوجانے لگتا ہے

کھڑا ہوں جا ﺅں پاﺅں پہ تومیرا سایا

آسمان کو ہاتھ لگانے لگتا ہے

آتا ہے جو دروازے کی درزّوںسے

گھر میں تیرے نقش بنانے لگتا ہے

تم نے جو باندھا ہے رستہ پیڑوں سے

مجھکو اپنے ساتھ چلانے لگتا ہے

شام گئے کوئی میرے دل کے کینوس پر

 اَشکوں سے تصویر بنانے لگتا ہے

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

   

نہیں چھوڑ سکتا میں روتا سمندر

اگر میرا دشمن بھی ہوتا سمندر

میں ہجرت جو کرتا کسی بھی جہاں میں

تمام عمر آنکھوں سے ڈھوتا سمندر

ترے ماتھے پر میں سجاتا ستارے

تری آنکھوں میں بھی سموتا سمندر

کہیں چاند تارے نہانے کو آتے

کہیں بادلوں میں بھگوتا سمندر

اسے جاگنے کی سزا مل رہی ہے

نہیں زندگی بھر یہ سوتا سمندر

تیرے شہر کویوں نہ جلنے میں دیتا

اگر میرے ہاتھوں میں ہوتا سمندر

ہر انسان نے اس کو میلا کیا ہے

میں تنہابھلا کیسے دھوتا سمندر

خریدیں

رابطہ

مدیران دیدبان

مندرجات

شمارہ جات

PRIVACY POLICY

Terms & Conditions

Cancellation and Refund

Shipping and exchange

All Rights Reserved © 2024

خریدیں

رابطہ

مدیران دیدبان

مندرجات

شمارہ جات

PRIVACY POLICY

Terms & Conditions

Cancellation and Refund

Shipping and exchange

All Rights Reserved © 2024

خریدیں

رابطہ

مدیران دیدبان

مندرجات

شمارہ جات

PRIVACY POLICY

Terms & Conditions

Cancellation and Refund

Shipping and exchange

All Rights Reserved © 2024